You are here
Home > Women >   مرکزی حکومت کی جانب سے حاملہ خواتین کے لیے زچگی فائدہ

  مرکزی حکومت کی جانب سے حاملہ خواتین کے لیے زچگی فائدہ

ان دنوں حاملہ خواتین کے لیے زچگی فائدہ(میٹرنیٹی بینیفٹ ) کے تحت مرکزی حکومت کی جانب سے پہلے بچے کی پیدائش پر چھ ہزار روپے دیے جانے کی اسکیم کا اعلان کیا گیا ہے ۔
کہتے ہیں جس ملک کی اقلیت خوش حال نہ ہو ، وہ ملک ترقی نہیں کر سکتا ۔ مختلف قومیں بھی اقلیت میں شمار کی جا سکتی ہے ، مگر ملک کی نصف آبادی ، جنہیں ہم نصف بہتر کہتے ہیں ،یا ہندی میں اردھانگنی وہ اگر خوش حال اور خواندہ نہ ہو ، تو ملک کیسے ترقی کر سکتا ہے ۔ ملک کی خواتین کا صحت مند رہنا ، تعلیم یافتہ ہونا اس لیے بھی ضروری ہے کہ آنے والی نسل بھی صحت مند اور تعلیم یافتہ ہو اور ایک مضبوط معاشرہ تشکیل پائے ۔ دنیا کے کئی ایسے ممالک ہیں ، جہاں کے عوام آسودہ ہیں اور ممالک تیزی سے ترقی کر رہے ہیں ، جس کی بڑی وجہ یہ ہے کہ عوام کی صحت اور تعلیم کا خیال خاص طور سے حکومت کے ذمہ ہے ۔ یعنی بہترین طبی خدمات اور تعلیمی ادارے سرکاری سطح پر عوام کے لیے بالکل مفت ہیں ۔
 مرکزی حکومت نے میٹرنیٹی بینیفٹ کے تحت خواتین کو ان کے پہلے بچے کی پیدائش چھ ہزار روپے دینے کی اسکیم کو لازمی بنانے کے لیے پورے ملک میں نافذ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔پہلے بچے کی پیدائش پر ملک کی ہر خاتون کو چھ ہزار روپے ملیں گے۔
وزیر اعظم نریندر مودی کی صدارت میں ہوئی کابینہ کی میٹنگ کے بعد مرکزی وزیر توانائی پیوش گوئل نے ایک پریس کانفرنس میں بتایا کہ زچگی فائدہ پروگرام (میٹرنیٹی بینیفٹ) کو پورے ملک میں نافذ کرنے کی تجویز کومنظوری دے دی گئی ۔انہوں نے بتایا کہ اس کا مقصد خواتین کو زچگی کے وقت میں ہونے والی تغذیہ عناصر کی کمی کودور کرنے میں مدد کرنا ہے ۔
دیکھا جائے ، تو حاملہ خواتین کے تعلق سے مودی سرکار کا یہ ایک بہترین قدم ہے ۔ کیونکہ غربت اور خط افلاس سے نیچے زندگی گزارنے والوں کی کمی نہیں ہے ۔ ایسے میں حاملہ خواتین کے لیے دوران حمل اچھی غذا لینا مشکل یا ناممکن ہو جاتا ہے ، جس کی وجہ سے اکثر زچگی کے دوران ماں یا بچے کی موت واقع ہو جاتی ہے ، یا پھر غیر صحت مند بچے کی پیدائش ہوتی ہے ۔ وزیر اعظم کی زچگی فائدہ مہم سے ایسی کئی خواتین فیض یاب ہو سکتی ہیں ۔ حاملہ خاتون کو اگر چھ ہزار روپے دیے جانے کا اعلان کیا گیا ہے ، تو تجویز پر عمل بھی کیا جانا چاہیے ، تاکہ ایسی خواتین کو کچھ راحت میسر ہو ۔

شیریں دلوی

Leave a Reply

17 − thirteen =

Top